Sune Kon Kisay Dard E Dil Lyrics 492

سُنے کون قصہ دردِ دل میرا غمگسار چلا گیا

سُنے کون قصہ دردِ دل میرا غمگسار چلا گیا
جسے آشنائوں کا پاس تھا وہ وفا شعار چلا گیا

وہی بزم ہے وہی دھوم ہے وہی عاشقوں کا ہجوم ہے
ہے کمی تو بس میرے چاند کی جو تہہ جزار چلا گیا

وہ سخن شناس وہ دور ہیں وہ گدا نواز وہ کہ جبیں
وہ حسیں وہ بحرِ علوم دیں میرا تاجدار چلا گیا

کہاں اب سخن میں وہ گرمیاں کہ نہیں رہا کوئی قدرداں
کہاں اب وہ شوق میں مستیاں کہ وہ پر وقار چلا گیا

جسے میں سناتا تھا دردِ دل وہ جو پوچھتا تھا غمِ دروں
وہ گدا نواز بچھڑ گیا وہ عطا شعار چلا گیا

بہیں کیوں بصیر نہ اشکِ غم رہے کیوں نہ لب پر میرے فغاں
ہمیں بے قرار وہ چھوڑ کر سرِ راہ گزار چلا گیا

پوسٹ کو شیئر کریں۔۔