Shah e wala mujhe taiba bula lo lyrics 225

شاہ والا مجھے طیبہ بلاؤ

شاہ والا مجھے طیبہ بلاؤ
طیبہ بلا لو مجھے طیبہ بلا لو
ڈیوڈھی کا اپنی کتا بنا لو
قدموں سے اپنے مجھ کو لگا لو

صدفے میں صدقے می صدقے بلا لو
فرقت کے مارے کو پیارے جھلا لو
مو لا جھلا لو مجھے آقا جھلا لو
دنیا کے جھگڑوں سے یکسر چھڑا کر

غیروں کی الفت کو دل سے مٹا کر
شاہ والا مجھے اپنا بنا لو
اپنا بنا لو مجھے اپنا بنا لو
نیکوں کے صدقے میں ہم سے بروں کو

زاروں نا زاروں مصیبت ذدوں کو
مولا نبھا لو میرے مولا نبھا لو
ہاں ہاں نبھا لو میرے مولا نبھا لو
ہوتے ہو تم کیوں مایوس و مضطر

کس واسطے ہو حیران و ششدر
دکھ درد والوں سنو دکھ درد والوں
طیبہ سےہر اک اپنی دوا لو
آنکھوں میں آؤ دل میں سماؤ

پردہ اٹھاؤ جلوہ دکھاؤ
حسرت ذدہ کی پیارے دعا لو
حسرت نکالو میری حسرت نکالو
دولت ہے نیا میری بھنور میں

مولا تیراؤ آکے نظر میں
موری خبریا مورے پیا لو
طیب ہوں نجدی عیب ہوں نجدی
اور یہ نہ ہو تو خایب ہوں نجدی

غائب ہوں نجدی مولا نکالو
جلدی نکالو انہیں جلدی نکالو
یہ نوری مضطر تیرا ثناگر
اور اس کا گھر بھر ہو حاضو در

اپنے گداگر کو در پہ بلا لو
امن و اماں سے ہمیں سرور بلا لو

پوسٹ کو شیئر کریں۔۔