rahat indori shayari in urdu 743

راحت اندوری کی اردو شاعری

Rahat Indori Poetry in Urdu
اردو شاعری راحت اندوری

Rahat Indori India kay bohat he mashoor poet hain. Jin kay aaj kal YouTube or WhatsApp par charchay hain. Apni Urdu Poetry or Shayari ka andaze baya un par khatam ho jata hai. In this Article mae aap ko un ki mashoor Ghazal or 2 line urdu poetry milay gi. Humari koshih ho gi key Rahat Indori ki famous poetry Shayri AAp logo key sath share kary gay. Un ki poetry mae hum SAD – Romantic – Love Har Tarha ki sheroshayari hogi Jo key Urdu – Hindi – Roman English Language mae ho gi.

Zuban to khol nazar to mila jawab to dy

زُبان تو کھول نظر تو مِلا جواب تو دے
میں کتنی بار لُوٹا ہوں مُجھے حِساب تو دے
Zuban to khol nazar to mila jawab to dy
Mai kitni bar loota hun mujay hisab to dy

تیرے بدن کی لخاوت میں ہے اُتار چڑھاؤ
میں تجھے کیسے پڑھوں گا مجھے کِتاب تو دے
Tery badan ki lkhawat mae hai utar chahao
Miae tujhy kesay parhoo ga mujay kitab to day

روز تاروں کو نمائش میں خلل  پڑتا ہے
چاند پاگِل ہےجو  اندھیرے میں نِکل پڑتا ہے
Roz taroo ko nemaish mie khalal prta hai
Chand pagil hai jo andhery mae nikal parta hai

کِس نے دستک دی ہے یہ  دِل پر کون ہے
آپ تو اندر ہیں باہِر کون ہے
Kis nay dastak de hai ye dil par kon hai
Aap to andar hai bahir kon hai

میری سانسوں میں سمایہ بھی بہت لگتا ہے
اور وہی شخص پرایا بھی بہت لگتا ہے
اور اُس سے ملنے کی تمنّا بھی بہت ہے
لیکن آنے جانے میں کرایہ بھی بہت لگتا ہے
Meri sansoo mae samaya bhi bohat lagta hai
Aor wohi shakhas praya bhi bohat lagta hai
Aor usi say milnay ki tamanna bhi bohat hai
Lekin aany jaany mae kraya bhi bohat lagta hai

Rahat Indori Shayari 2 line

شاخوں سے ٹُوٹ جائیں وہ پتے نہیں ہیں ہم
آندھی سے کوئی کہہ دے کہ اوقات میں رہے
Shakhoo say toot jaen wo pattay nahi hai hum
Aandhi say koi keh day k okat mai rahi

گُلاب، خُواب، دوا، زہر، جَام کیا کیا ہے
میں آ گیا ہوں ، بتاؤ اِنتظام کیا کیا ہے
gulaab, khawab, dawa, zehar, jaam kia kia hai
Main agia hun, batao intazam kia kia hai

جوانیوں میں جوانی کو دُھول کرتے ہیں
جو لوگ بھول نہیں کرتے وہ بھول کرتے ہیں
Jawanioo mae jawani ko dhool kartay hain
Jo loog bhool nahi kartay wo bhool kartay hain

اگر انار کلی ہے سبب بغاوت کا
سلیم ہم تیری شرطیں قبول کرتے ہیں
Agar anar kali hai sabab bagawat ka
Saleem hum teri shartain qabool kartay hain

تیری ہر بات مُحبت میں گوارا کر کے
دِل کے بازار میں بیٹھے ہیں خسارا کر کے
Teri har baat muhabbat mai gawara kar kay
Dil kay bazar mai bethay hain khasarar kar kay

ایک چِنگاری نظر آئی تھی بستی میں اُسے
وہ الگ ہَٹ گیا ،آندی کو اشارہ کر کے
مُنتظِر ہوں کے ستاروں کی ذرا آنکھ لگے
چاند کو چَھت پہ بُلا لوں گا اِشارہ کر کے
Aik chingari nazar aati thi basti mai usay
Wo alag hat gia, aandi ko eshara kar kay
Muntazir hunk ay sitaroo ki zara aankh lagay
Chand ko chath pay bulaoon ga ishar kar kay

Rahat Indori Ghazal – Roman English
Kahin Alely Mein Mil Kar Jhanjoor Dun Ga Usay

کہیں اکیلے میں مل کر جھنجھوڑ دوں کا اُسے
جہاں جہاں سے وہ ٹوٹا ہے جوڑ دوں گا اُسے
Kahin Alely Mein Mil Kar Jhanjoor Dun Ga Usay
Jahan Jahan Say Wo Toota Hai Jor Dun Ga Usay

مُجھے وہ چھوڑ گیا یہ کمال ہے اُس کا
اِرادہ میں نے کیا تھا کہ چھوڑ دوں گا اُسے
Mujy Wo Shor Gia Ye Kamal Hai Us Ka
Erada Main Nay Kia Tha Key Shoor Dun Ga Usay

بدن چَرا کے وہ چلتا ہے مُجھ سے شیشہ بدن
اُسے یہ ڈر ہے کہ میں توڑ پھوڑ دوں گا اُسے
Badan Chara Kay Wo Chalta Hai Mujh Say Seeshae Badan
Usay Ye Dar Hai Key Main Tor Phor Dun Ga Usay

پسینے بانٹتا پھرتا ہے ہر طرف  سورج
کبھی جو ہاتھ لگا تو نچوڑ دوں گا اُسے
Pasenay Banteta Phirta Hia Har Tarf Suraj
Kabi Jo Hath Laga To Nachor Dun Ga Usay

مزہ چکھا کے ہی مانا ہوں مَیں بھی دُنیا کو
سمجھ رہی تھی کہ ایسے ہی چھوڑ دوں گا اُسے
Maza Chikha Key He Mana Hun Main Bi Dunya Ko
Samajh Rahi Thi Key Esay He Shoor Dun Ga Usay

پوسٹ کو شیئر کریں۔۔