mehshar afridi urdu poetry 624

محشر آفریدی کی شاعری – Mehshar Afridi Poetry

Mehshar Afridi
2 line sad poetry in Urdu text

یہ عشق ایک جوا ہے بتاؤ کھیلو گے
سمجھ لو داؤ پہ سب کچھ لگانا پڑتا ہے
ہر آدمی سے طبیعت تو مِل نہیں سکتی
مگر یہ ہاتھ تو پھر بھی مِلانا پڑتا ہے
Ye ishq ek juaa hae batao khelo gay
Samaj lo dao pay sab kuch lagana parta hai
Har aadmi ki tabayat to mil nahi sakti
Magar ye haath to phir bhi milana parta hai

اپنے معیار سے  نیچےتو  میں آنے سے رہا
شیر بھوکا ہو مگر گھاس تو کھانے سے رہا
کر سکو تو میری چاہت کا یقین کر لینا
اب  تو میں چیر کر اپنا دِل  تو دیکھانے سے رہا
Apnay meyar sy nechy to mai aany sy raha
Sher bhoka ho magar ghaas to khany sy raha
Kar sako to meri chahat ka yaqeen kar lena
Ab to mai cheer kar apna dil to dekhany sy raha

کلینڈر بھی کہاں تک خستہ حالی کو  چھپائیں گے
نئی جگہوں سے روزانہ پلستر ٹوٹ جاتا ہے
میرا دشمن پریشاں ہے میری ماں کی دعاؤں سے
وہ جب بھی وار کرتا ہے تو خنجر ٹوٹ جاتا ہے
Kalender Bhi Kahan Tak Khasta Hali Ko Chupaen Gay
Nae Jagho Say Rozana Plastar Toot Jata Hai
Mera Dushman Presha Hai Meri Maa Ki Duwaun Say
Wo Jab  Bhi War Karta Hae To Khanjar Toot Jata Hai

پوسٹ کو شیئر کریں۔۔